دنیا کا تیز ترین جانور جو اتنا تیز بھاگتا ہے کہ آپ کی آنکھ کو نظربھی نہ آئے

نیویارک(میکس نیوز پاکستان) چیتے کی رفتار ضرب المثل بنی ہوئی ہے جو 96کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے دوڑ سکتا ہے۔ تاہم اب سائنسدانوں نے ایک چیونٹی دریافت کر لی ہے جس کی رفتار کے متعلق سن کر آپ کے لیے یقین کرنا مشکل ہو جائے گا۔ میل آن لائن کے مطابق اس چیونٹی کا نام ’ڈریکولا چیونٹی‘ہے جس پر امریکہ یونیورسٹی آف الینوائس کے سائنسدانوں نے تحقیق کرنے کے بعد حیران کن انکشاف کیا ہے کہ اس کے دوڑنے کی رفتار انسان کی آنکھ جھپکنے کی رفتار سے 5ہزار گنا زیادہ ہے۔ یہ چیونٹی 0.00015سیکنڈ میں صفر سے 320کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار پکڑ سکتی ہے۔ یہ اتنی رفتار ہے کہ انسان کی آنکھ اسے دیکھ ہی نہ سکے۔

سائنسدانوں کے مطابق اس چیونٹی کے جبڑا کسنے اور شکار کو قابو کرنے کی رفتار بھی اتنی ہی تیز ہے۔ یہ ڈریکولا چیونٹیاں افریقہ، آسٹریلیا اور جنوب مشرقی ایشیاءمیں پائی جاتی ہیں۔انہیں ڈریکولا چیونٹی اس لیے کہا جاتا ہے کہ یہ اپنے بچوں اور لاروا کا خون چوستی ہیں۔ یہ انہیں جان سے نہیں مارتیں،یہ خوراک حاصل کرنے کے لیے صرف اتنا ہی خون چوستی ہیں کہ وہ زندہ رہیں۔یہ چیونٹیاں بنیادی طور پر 1994ءمیں دریافت ہوئی تھیں تاہم ان کی حیران کن رفتار کا انکشاف اب سامنے آیا ہے۔سائنسدانوں نے ان کے جبڑے کی رفتار دیکھنے کے لیے ان کی ویڈیو بنائی تاہم نارمل رفتار میں جبڑے کو حرکت کرتے دیکھنا ممکن نہ تھا، جس پر سائنسدانوں نے ویڈیو کی رفتار 6000Xکم کی جس پر انہیں معلوم ہو پایا کہ یہ جبڑا کس رہی ہے۔یہ چیونٹی اپنے شکار کو 3.7سیکنڈز تک جبڑے میں دبائے رکھتی ہے جو اس کی موت کے لیے کافی ہوتا ہے۔